منفی خیالات

منفی خیالات

عقائد کی کمزوری سے پیدا ہونے والی روحانی بیماریوں میں سرِفہرست اور اہم بیماری ہے منفی خیالات جوکہ آہستہ آہستہ تمام روحانی بیماریوں کی وجہ بنتی ہے۔ جب عقیدہ کمزور ہوگا تو اﷲتعالٰی سے دوری بڑھتی جائیگی ایسے میں سب سے پہلے آپکو جو روحانی بیماری دبوچ لے گی وہ ہے منفی خیالات کی بوچھاڑ۔ یہ خیالات کسی قِسم کے بھی ہوسکتے ہیں انجانا سا خوف ،لوگوں پر حددرجہ بے اعتباری، دوسروں کے بارے میں پہلے سے غلط رائے قائم کرلینا، کسی بھی بات میں پہلے سے کوئی منفی نتیجہ نکال لینا۔ جب انسان اِن کیفیات کا شکار ہوگا تو پھر منفی خیالات سے منفی عمل کی جانب بڑھنے لگے گا۔ جس کسی کے بارئے میں منفی خیالات رکھے گا اُسکو نقصان دینے کے بارئے میں یا  اُسکا  بُرا سوچتا رہیگا  اور اگر مان لو اُسکے ساتھ کچھ بُرا ہوجاتا ہے تو دِل ہی دِل میں خوشی محسوس کریگا۔ دُوسروں پر بلاوجہ بے اعتباری ہوگی تو اپنی پریشانی و تکالیف کسی سے بانٹنا مناسب نہیں سمجھے گا نتیجہ پریشانیوں میں مبتلا ہوکریا تو غلط فیصلے کرئےگا جس سے اُسکو خود بھی تکلیف ہوگی اور دوسروں کی تکلیف کا بھی سبب بنے گا یا پھر ڈِپریشن اور دوسری نفسیاتی بیماریوں کا شکار ہوجائے گا۔جب پہلے سے منفی نتیجہ  نکال لےگا تو کبھی بھی کسی کام کو پایہ تکمیل تک نہ پہنچا سکے گا یا پھر منفی طریقہ عمل اِختیار کرئےگا۔ ایسے مریض اکثر خود کو بہت مثبت وطاقتور   یا پھر معصوم اور لاچار محسوس کرتے ہیں اور آہستہ آہستہ احساسِ برتری یا کمتری کا شکار ہوجاتے ہیں۔

 

میاں صاحب کی کتاب جادُو اور جنات آسان علاج سے اقتباس

error

Enjoy this blog? Please spread the word :)

Facebook0
Twitter23k
Pinterest0
LinkedIn